Taqdeer Ko Rashk Hoga Tum Per Bhi

taqdeer ko rashk hoga tum per bhi

taqdeer ko rashk hoga tum per bhi

ہاں جھک سکتے ہیں گنبدِ قصرِ سلطانیِ بھی۔۔۔
گرتو اس عارضے سے نکل کر نورِ مجسم ہو جاٸے۔۔۔
تقدیر کو رشک ہو گا تم پر بھی۔۔۔
پیشی کے لیے اک بار جو تو زیر ہو جاٸے۔۔۔
یہ خاکی بھی رنگِ جگنو مزین ہوگا۔۔۔
بد نگاہی سے جو تو زاہد نگاہ ہو جاٸے۔۔۔
یہ پیچ و تاب بھی ساز گار ہو جاٸے گا۔۔۔
کتاب خواں سے جو تو صاحبِ کتاب ہو جاٸے۔۔۔

تحریر: صارفہ اسلم


LIKE OUR FACEBOOK PAGE


Leave a Reply

Submit Your Poetry To Us : Submit Here