Jis Mein Guzar Gai Umar Sabhi

jis mein guzar gai umar sabhi

jis mein guzar gai umar sabhi

چاہ
نہ انا کی دھوم دھام رہی
نہ شور رہا خودی کا
یہ بازگشت ہے چار سو
یہ عشق کی نزاکتیں
پھر بھی شوق تیری وصال کا
چاہ ایک نگاہ کی
جس میں گزر گئی عمر سبھی
بکھر گئیں سب ریاضتیں

Chaah
Na ana ki dhoom dhaam rahi
Na shor raha khudi ka
Ye baazgusht hai chaar su
Ye ishq ki nazakaten
Phir bhi shoq Teri visaal ka
Chaah ek nigaah ki
Jisme guzar gayi umar sabhi
Bikhar gayin sab riyazaten

by: Rutba Zayan

Leave a Reply

Submit Your Poetry To Us : Submit Here