Aik Shaks Andhero Mein Bhi Ujalon Ki Tarah Tha

aik shaks andhero mein bhi ujalon ki tarah tha

aik shaks andhero mein bhi ujalon ki tarah tha

خوبصورت اتنا کہ پھولوں کی طرح تھا

اک شخص اندھیرے میں بھی اجالوں کی طرح تھا

خوابوں کی طرح تھا نہ خیالوں کی طرح تھا

وہ علمِ ریاضی کے سوالوں کی طرح تھا

اُلجھا ہوا ایسا کہ کبھی حل نہ ہو پایا

سُلجھا ہوا ایسا کہ مثالوں کی طرح تھا

وہ مل تو گیا مگر اپنا ہی مقدر

شطرنج کی اُلجھی ہوئی چالوں کی طرح تھا

وہ روح میں خوشبو کی طرح ہو گیا تحلیل

جو دور بہت دور ستاروں کی طرح تھا

شاعر: شاہد عزیز انجم

Leave a Reply